اداکار اظفر رحمان نے حال ہی میں می ٹو مہم سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ انہیں ماضی  میں کئی خواتین فنکاروں کی جانب سے ہراساں کیا جاتا رہا لیکن وہ ان کا نام لینا پسند نہیں کرتے۔

اداکار پرائم ٹائم کے شو بائی دے وے میں جلوہ گر ہوئے اور دوران شو بیگم نوازش نے اظفر رحمان سے می ٹو مہم سے متعلق  سوال کیا۔

اداکار اظفر رحمان کا می ٹو مہم سے متعلق اظہار خیال کرتے ہوئے کہنا تھا کہ می ٹو ایک سنجیدہ معاملہ ہے، آپ کسی کے ساتھ بھی اپنے لیے زبردستی نہیں کرسکتے، یہ باہمی رضامندی سے ہے۔

اداکار کے مطابق اگر دو لوگ ایک دوسرے کو پسند کرتے ہیں ایک دوسرے کو سمجھتے ہیں تو باہمی رضامندی کے ساتھ کچھ لو اور دو کے تحت کوئی بھی کام کیا جاسکتا ہے لیکن اگر ایسا نہیں ہے تو یہ غلط بلکہ مکمل طور پر غلط ہے۔

 

اظفر رحمان کا کہنا تھا کہ  وہ می ٹو مہم کی مکمل طور پر حمایت کرتے ہیں۔

انہوں نے انکشاف کیا کہ ماضی میں انہیں بھی کئی خواتین فنکاروں کی جانب سے ہراساں کیا جاتا رہا لیکن وہ ان کا نام لینا پسند نہیں کرتے۔

اداکار نے کہا کہ سوشل میڈیا پر کسی کو بھی بغیر تحقیق ایکسپوز کرنا غلط ہے کیونکہ بہت سے لوگ ہیں جو اس طرح کی مہم کو اپنے فائدے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔

بالی وڈ میں کام کی خواہش سے متعلق اظفر رحمان کا کہنا تھا کہ وہ جنون کی حد تک بالی وڈ میں کام کے خواہشمند تھے، دو سے تین مرتبہ بالی وڈ کاسٹنگ ایجنٹ کی جانب سے آفرز بھی موصول ہوئیں اور انہوں نے آڈیشن بنا کر بھی بھیجے لیکن وہ سب بری طرح ریجیکٹ کردیے گئے۔

جواب ڇڏي وڃو

توهان جو برق‌ٽپال پتو شايع نہ ڪيو ويندو. گھربل شعبا مارڪ ڪيل آهن *